ہمارے معاشرے کے متلق خوبصورت اقوال

Inspirational      Islamic     Quotes

Inspirational Islamic Quotes

1

اگر ہم اپنے فرا ئض ادا کرنا شروع کر دیں تو ہمارے حقوق کا مسئلہ خود بہ خود حل ہو جائے گا کیوں کہ ہمارے فرائض دوسروں کے حقوق ہیں

2

مرد کا گناہ وقت کے تلاب میں کنکر کی طرح ڈوب جاتا ہے جبکہ عورت کا گناہ ساری عمر کنول کے پھول کی مانند سطح آب رہتا ہے

3

لوگوں کو اس بات سے غرض نہیں ہوتی ہے کہ آپ خوش رہتے ہیں انہیں بلکہ انہیں فرق اس بات سے پڑتا ہے کہ آپ انہیں خوش رکھتے ہیں یا نہیں

4

ہم اس بدنصیب معاشرے کا حصہ ہے جہاں سرکاری ملازم کام نہ کرنے کی تنخوا اور کام کرنے کی رشوت لیتا ہے

5

لوگوں کو بیوقوف بنانے سے کہیں زیادہ مشکل کام اس بات پر قائل کرنا ہےکہ وہ بیوقوف بنائے جا رہے ہیں

6

بہت سے لوگ دنیا میں ایسے ہیں جن کو دل کی سچائی اور اچھائی سے کوئی سروکار نہیں ہوتا وہ بس ظاہری خوبصورتی کے پیچھے بھاگتے ہیں

7

ہمارا معاشرہ اب ایسا بن چکا ہے جہاں کہانیاں لکھنے والے کم اور کہانیاں گھڑنے والےجگہ جگہ ملیں گے

8

فقط ایک عورت کو دیکھ کر ایمان کھو دینے والی قوم کے نوجوان اپنےبنیادی حقوق کے حصول کے حقوق کیلئے ایمانی طاقت کہاں سے لائیں گے

9

مرد آنکھیں نیچے نہیں کرنا چاہتا اور عورت پردے کو جہالت سمجھتی ہے مگر دونوں کو ہی عزت اور احترام کی تلاش ہے۔

10

مجھے خیرت اس باپ پر ہوتی ہے جواپنی بیوی کو تو جوتے کی نوک پر رکھتا ہےمارتا پیٹتا ہےمگر اپنی بیٹی کے لئے ایسے دولہے

کی امید رکھتا ہےجو اسکی بیٹی کو رانی بنا کر رکھیے۔

11

ہم اس بدنصیب معاشرے کا حصہ ہےجہاں حسن کا معیار گورا رنگ اور عقل کا معیار انگریزی زبان ہے۔

12

اگر نیتوں کا اثر چہروں پر نظر آنے لگتا تو معاشرے کا ہر فرد نقاب کرنے پر مجبور ہوجاتا ۔

13

اللہ کو بھول کر اللہ سے لاتعلق ہوکر شہد کی مکھیوں کا چھتہ تو بنایا جاسکتا ہے لیکن انسانی معاشرہ نہیں ۔

14

کچھ لوگوں کی عادت ہوتی ہے وہ ہمیشہ ایک ٹانگ اٹھائے پھرتے ہیں جہاں کسی کی دکھتی رگ دیکھی و بہی پر رکھ دیتے ہیں۔

15

کتنی عجیب بات ہے نہ کہ ہم پوری شادی ناچ گانے کے ساتھ نکال دیتے ہیں اور آخر میں جب بیٹی کو رخصت کرنا ہو تو قرآن اٹھا لاتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں حضرت علی کے50 مشہور اقوال

16

آج تک انسان ایسا کچرہ دان نہیں بنا سکا جس میں وہ اپنی نفرتیں جہالت اور تعصب پھنک سکے۔

17

ہم نفرتوں کےاس قدر عادی ہوچکے ہیں کہ محبت بانٹنے والے کو بھی شک کی نگاہ سے دیکھتے ہیں۔

18

یہ بڑے دکھ کی بات ہے کہ اب ہمارا ایک دوسرے کے دکھ کے ساتھ کوئی واسطہ نہیں رہا۔

19

مرد کی بھی عزت نفس ہوتی ہےیہ الگ بات ہے کہ معاشرہ عورتوں کی عزت پر زیادہ توجہ دیتا ہے۔

20

دنیا کے سامنے مسکرایا کرو اور اللہ کے سامنے رویا کروکیونکہ دنیا مسکرانے والے کو ہی پسند کرتی ہےاور اللہ تعالی رونے والوں کی پکار سنتا ہے۔

21

اہم دن وہ نہیں تھا جس دن آپ دنیا میں آئےبلکہ اہم دن تو وہ ہوگا جس دن آپ یہ جان لو گےاس دنیا میں کیوں اور کس مقصد کے لیے بھیجا گیا۔

22

مسجد میں سیمنٹ کی بوری دیتے وقت اپنے اردگرد دیکھ لیجیے اگر کوئی غریب حاجت مند ہو تو آٹے کی بوری پہلے وہاں دیجئے ۔

23

گاؤں چھوڑ کر شہر آیا فکر وہاں بھی تھی یہاں بھی ہےوہاں فصلیں خراب ہورہی تھیں یہاں ںسلیں خراب ہو رہی ہیں۔

24

غرور اور غفلت کا نشہ شراب سے بھی زیادہ ہوتا ہےجو اس نشے میں مبتلا ہوجاتا ہے وہ جلد ہوش میں نہیں آتا ہے۔

25

اپنی حامیوں کو پس پشت ڈال کر ہر شخص کہہ رہا ہے زمانہ خراب ہے۔

26

طلاق مرد دیتا ہےاورداغ عورت کے ماتھے پر لگتا ہےچا ہے اس میں عورت کا قصور ہو یا نہ ہومرد سے کوئی نہیں پوچھتا کہ بیٹا تم نے طلاق کیوں

دی لیکن عورت کو قدم قدم پر احساس دلایا جاتا ہےتم ہی بیوی بننے کے قابل نہیں۔

27

ہماری پوری نسل کو یہ سبق پڑھایا جا رہا ہے کہ جو کام مرد کر سکتے ہیں وہ عورتیں بھی کر سکتی ہیں اب ان عقل کے اندھوں کو کون سمجھائےکیا عورت کع مرد کے کام کرنے کے لئے تخیق نہیں کیا گیا بلکہ عورت کے ذمے وہ کام لگائے گئے ہیں جو مرد کے بس کی بات نہیں

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *